Noshi Gilani Urdu Poets

Noshii Gillani Two Lines Poetry

گھیر لیا ہے وحشت نے
اِک بے نام مسافت نےدل کا رستہ دیکھ لیا ہے
ایک اداس محبت نے

شہر ِ وفا برباد کیا ہے
بے مہری کی عادت نے

آنکھوں کو حیرانی دی ہے
درد کی اتنی شدت نے

ہجر مسافر کر ڈالا ہے
آخر اپنی قسمت نے

کارِ سخن آسان کیا ہے

صبح و شام ریاضت نے

———-
 jab shumar karna
Kitna sahal jana tha ..!!
Khusbuon ko choo lena,
Barishon k Mausam mein..
Shaam k har manzar ko,
Ghar mein qaid kar lena ..!!
Roshni.. Sitaron ko..
Muthiiyoo mein bhar lena ..!!
Kitna sahal jana..!!
khusbuon ko choo lena..
Jugnon ki baton se,
Phool jesay aagan mein
Roshni si kar lena ..
Us ki yad ka chehra
khuwab_nak ankhon mein
jheel k gulabon par
daer tak saja rakhna,,!!
Kitna saahel jana..!!

Ay ! nazar ki khush fehmi
is tarha nahi hota !!
Aksar ye bhi hota hay
Mohabaton mein khud apna
dil dukhana
parta hay..!!!
Titliyan pakarnay ko ..
door jana parta hay !!

Ay ! nazar ki khush fehmi
is tarha nhi hota !

———————

تجھ سے اب اور محّبت نہیں کی جاسکتی
خُود کو اِتنی بھی اذیت نہیں دی جاسکتی
جانتے ہیں کہ یقین ٹُوٹ رہا ہے دل پر
پھر بھی اب ترک یہ وحشت نہیں کی جاسکتی
حبس کا شہر ہے اور اِس میں کسی بھی صُورت
سانس لینے کی سُہولت نہیں دی جاسکتی

روشنی کیلئے دروازہ کُھلا رکھنا ہے
شب سے اب کوئی اجازت نہیں لی جاسکتی

عشق نے ہجر کا آزار تودے رکھا ہے
اِس سے بڑھ کو تورعایت نہیں دی جاسکتی

Hijar Ki Shab main Qaid Kre ya….ہجر کی شب میں قید کرے یا صُبح وصَال میں رکھے

اچھّا مولا! تیری مرضی تو جس حال میں رکھے

کھیل یہ کیسا کھیل رہی ہے دل سے تیری محبّت
اِک پَل کی سرشاری دے اور دِنوں ملال میں رکھے
میں نے ساری خُوشبوئیں آنچل سے باندھ کے رکھیں
شاید ان کا ذِکر تُو اپنے کسی سوال میں رکھے

کِس سے تیرے آنے کی سرگوشی کو سُنتے ہی
میں نے کِتنے پھُول چُنے اور اپنی شال میں رکھے

مشکل بن کر ٹَوٹ پڑی ہے دِل پر یہ تنہائی
اب جانے یہ کب تک اس کو اپنے جال میں رکھے

__________________

6 Comments

  • Kitna sehel jana tha
    Khushbo’on ko choo layna
    Barish k mosam main Shaam ka har ik manzar
    Ghar main qaid kar layna
    Roshni sitaroon ki Muthiyoon main bhar layna

    Kitna sehel jana tha
    Khushbo’on ko choo layna
    Jugno’on ki batoon say Phool jaysay aangan main
    Roshni si kar layan
    Us ki yaad ka chehra Khawabnak aankhoon ki
    Jheel k gulaboon per dair tak saja rakhna
    Kitna sehel jana tha

    Aey nazar ki khus-fehmi ! is tarha nahi hota
    “Titliyan pakarnay ko door jana parta hay”

  • safar malaal ka hei aur chal rahi huun mei
    ghubaar-e-shab ki udasi mei dhal rehi huun mei

    ajeeb barf ki barish badan pe utri hei
    ke jis ki aag mei chup chaap jal rehi huun mei

    phir ik charaagh jala shaam ki haveli mein
    phir ek dard se aakhir sambhal rehi huun mei

    ye rakh rakhaao usay jaan’ne naheen de ga
    ke apne aap mei kese pighal rahi huun mei

    ye ishq sach se juda kese ho gaya jaana?
    ab is saval se bahar nikal rehi huun mei

    bas ek ishq meri zaat per saheefa ho
    mere khuda! ye aqeeda badal rahi huun mei

    -NOSHI GILANI 🙂

  • Urdu Poetry( Noshi Gilani) ,Best Urdu Poetry Gazzal/Shaiyri

    Koi muj ko maira bharpoor sarapa laa day
    Mairay bazoo,mairi ankhain maira chehra laa day

    Aisa darya jo kisi oar samandar main gray
    Iss say behtar hai k muj ko miara sehra laa day

    Kuch nahi chahiye thuj say ay mairi umer rawan
    Miara bachpan,mairay jugnoo mairi guryya laa day
    Naya mosam mairi baynai ko tasleem nahi
    Mairi ankhon ko wahi khwab purana laa day

    Jis ki ankhain mujay andar say be parh sakthi hoan
    Koi chehra tho mairay shehr may aisa laa day

    Kishti jaan tho bahwar main hai kai bharsoon say
    Ay khuda ab tho dabo day ya kinara laa day
    NOSHI GILANI Poetry

Leave a Comment